کورونا وائرس اورغریب

کورونا وائرس اورغریب

کورونا وائرس کے اس ہنگامے میں اگر آپ دکان اور بالخصوص سوپر مارکيٹ میں جائیں تو ایک ایسا ہجوم دیکھنے کو ملے گا جو شاید آپ عام دنوں میں نہ دیکھیں۔ جو سامان پندرہ یا تیس دنوں میں بکنا تھا وہ ایک دن میں بک رہا ہے یا شاید اس سے بھی زیادہ۔ سامان کی پروڈکشن اور ترسیل میں بھی یقیناً کئی گنا اضافہ ہوا ہو گا۔ یہی حال میڈیکل کی مصنوعات کے ساتھ بھی ہو رہا ہو گا۔

…ہو ‘Bullwhip Effect‘ ایسے جیسے

یعنی سامان کی تیاری، ترسیل اور بکری کو جیسے چھانٹا پڑ گیا ہو اور اس میں تیزی آگئی ہو۔
ہماری جیبوں سے نکل کر اور اس ساری صورتحال سے پیدا ہونے والا پیسا کدھر جائے گا؟ یقیناً چھوٹے دوکاندار کو بھی ملے گا مگر کتنا؟ سو میں سے ایک؟ لیکن اصل مال تو سرمایہ دار لے جائے گا، دیہاڑی دار مارا جائے گا، غریب غریب تر بلکہ مارا جائے گا، غریب ممالک محتاج اور۔۔۔ لیکن دنیا کی سرمایہ دار ایک فیصد آبادی مزید امیر ہو جائے گی، ان کا تسلط اس معاشی نظام پر مزید مضبوط ہو جائے گا۔۔۔

یہاں اضافہ کرتا چلوں کہ اس ساری صورتحال میں دیہاڑی دار تو کام کر نہیں سکتا، یا تو کام ہے ہی نہیں اور یا ہر ملک کی انتظامیہ دیہاڑی دار کا ٹھیلہ اکھاڑ بھینکتی ہے۔۔۔

ضروری نہیں ہر چیز سازش ہو لیکن جو نظر آیا وہ لکھ دیا۔۔۔

والله اعلم، آخرکار ہو گا وہی جو میرا رب چاہے گا اور وہ سب دیکھ رہا ہے۔۔۔

Leave a Reply